عمران خان یاد رکھیں تقریر کشمیر کی آزادی کا عنوان نہیں بن سکتی‘ڈاکٹر خالد

اسلام آباد(پ ر) جماعت اسلامی آزادجموں وکشمیر کے امیر ڈاکٹر خالد محمود خان نے کہا ہے کہ عمران خان یاد رکھیں اقوام متحدہ میں ایک تقریر کشمیر کی آزادی کا عنوان نہیں بن سکتی ،کشمیریوں کو عالمی سطح پر اپنا مسئلہ خود پیش کرنے کا موقع دیا جائے ،مودی کے اقدامات کے خلاف اسلام آباد سے جوابی اقدامات ہونے چاہیں ،ہندوستان کے مقابلے میں کمزوری دکھانے کے بجائے پوری قوت کے ساتھ مقابلہ کیا جائے پوری قوم شانہ بشانہ ہے ،جماعت اسلامی وحدت کشمیراور حق خودارادیت پر کوئی کمپرمائز نہیں کرے گی ،جماعت اسلامی 5جنوری سے 5فروری تک وحدت کشمیر اور حق خودارادیت مہم چلائے گی ،جماعت اسلامی آمدہ انتخابات میں بھرپور انداز سے حصہ لے گی ،تارکین وطن نے بھرپور انداز سے مسئلہ کشمیر کو اجاگر کیا ہم ان کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں ،ان خیالات کااظہار انہوں نے جماعت اسلامی آزادجموں وکشمیر کے زیر اہتمام یوم حق خودارادیت کے موقع پر تحریک آزادی کشمیر ماضی حال اور مستقبل کے عنوان سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر تحریک کشمیر برطانیہ کے صدر فہیم کیانی ،نائب امیر جماعت اسلامی راجہ فاضل تبسم ،سید علی گیلانی کے نمائندے عبداللہ گیلانی ،ناظم جموں وکشمیر اسلامی جمعیت طلبہ مسرور ظفر ،جماعت اسلامی آزادکشمیر ضلع اسلام آباد کے امیر اشرف بلال ،ضلع راولپنڈی کے امیر صالح طاہر سمیت دیگر قائدین نے خطاب کیا ،اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے داکٹر خالد محمود خان نے کہا کہ مسئلہ کشمیر نازک اور مشکل ترین دور سے گزررہا ہے لیکن اہل کشمیر کوہ گراں کی طرح استقامت کے ساتھ ڈٹے ہوئے ہیں تحریک آزادی کشمیر 1832اور 1919سے شروع ہے کشمیریوں نے تاریخ ساز اور بے مثال قربانیاں پیش کی ہیں شہداء کے مقدس لہو اور کشمیریوں کے عزم اور اللہ کی نصرت کے بھروپر کشمیرکی آزادی کو کل کے سورج کی طرح طلوع ہوتے دیکھ رہا ہوں کشمیرکی آزادی نوشتہ دیوار ہے انہوں نے کہاکہ اقوام متحدہ میں کشمیری اور پاکستان نہیں بلکہ خود ہندوستان گیا ہے کشمیریوں نے عملاً کشمیر کو آزاد کروالیا تھا مجاہدین بارمولہ تک پہنچ گئے تھے واضح شکست دیکھ کر ہندوستان اقوام متحدہ میں گیا تا کہ سیز فائر کروا کر مجاہدین کے بڑھتے قدم رکوا سکے ،انہوں نے کہاکہ 5اگست کے بعد ہندوستان کے خلاف جوابی اقدامات اسلام آباد اور مظفرآباد سے ہونے چاہیں تھے جو نہیں ہوسکے میں نے راجہ فاروق حیدر خان کو تجویز دی تھی کہ وہ بھمبر سے تائو بٹ تک مشترکہ طورپر مہم چلائی جائے عوام کو بیدار کیا جائے اور پھر سیز فائر لائن کی طرف مارچ کیا جائے لیکن تا حال یہ نہیں ہوسکا انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی تحریک آزادی کشمیر کی پشتیبان اور صبح آزادی تک یہ کردار ادا کرتی رہے گی انہوں نے کہاکہ کشمیری پاکستان سے محبت کی قیمت ادا کررہے ہیں اس موقع پر تحریک کشمیر برطانیہ کے صدر فہیم کیانی نے کہاکہ تحریک آزادی کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کے لیے بھرپور کردار ادا کیا ہے عالمی اسٹیبلشمنٹ تین اہداف کو لے کر آگے بڑھ رہی ہے پاکستان میں لبرل ازم کا فروغ ،عسکری اداروں کو کمزور کرنا اور پاکستان سے ایٹمی صلاحیت چھیننا ان اہداف کو لے کر وہ آگے بڑھ رہے ہیں اور ہم نے اس کا مقابلہ کرنا ہے پوری قوم پاک فوج کے شانہ بشانہ ہے پاکستان کی مضبوطی کشمیرکی آزادی کی ضمانت ہے اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے عبداللہ گیلانی نے کہاکہ 5اگست کے بعد مودی کے اقدامات کے جواب میں پاکستان اور آزادکشمیر سے اقدامات کا نہ ہونا مایوسی کا پیغام پہنچا جارہا ہے انہوں نے کہاکہ آذربائیجان کی طرف سے اپنے مقبوضہ علاقے کو طاقت کے ذریعے آزاد کروانا اس صدی کی سب سے بڑی فتح ہے یہ ثابت ہوا کہ مقبوضہ علاقوں کو طاقت کے ذریعے ہی آزاد کروایا جاسکتا ہے 57اسلامی ممالک بیٹھ کر طے کر لیں ہم نے کشمیر اور فلسطین آزاد کروانے ہیں تو یہ گھنٹوں میں آزاد ہوسکتے ہیں اسی طرح امت کے دیگر مسائل بھی حل ہوسکتے ہیں ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں